تحریک لبیک کا جلسہ لیاقت باغ کو سیل کرکے رینجرز کے حوالے

لاہور: تحریک لبیک کا جلسہ ناکام بنانے کے لیے لیاقت باغ کو سیل کرکے رینجرز کے حوالے کر دیا گیا۔اطراف میں بھی پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری تعینات ہے۔ ۔تفصیلات کے مطابق تحر یک لبیک پاکستان نے لیاقت باغ میں آج فیض آباد دھرنے کے دوران جاں بحق کارکنوں کی برسی اور ناموس رسالت ﷺ جلسے کا اعلان کیا ہوا ہے۔
حکومت نے جمعے کی رات سے تحریک لبیک کے خلاف ملک گیر کریک ڈاؤن کرتے ہوئے پارٹی کے سربراہ خادم حسین رضوی، دیگر رہنما اشرف آصف جلالی، پیر افضل قادری اور سیکڑوں کارکنوں اور عہدے داروں کو گرفتار کرلیا ہے۔مولوی خادم رضوی کے بیٹے نے اپنے والد کی گرفتاری کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ جمعہ کی شام کو تحریک لیبک کی تمام تر ضلعی قیادت کو گرفتار کیا جاچکا ہے۔

اس کے علاوہ پولیس کی جانب سے ہزاروں کارکنان کو بھی دھر لیا گیا تھا۔جس کے بعد مختلف علاقوں میں مزاحمت اور توڑ پھوڑ کے چھوٹے موٹے واقعات سامنے آئے تاہم بڑے پیمانے پر احتجاج نہ ہو سکا ۔حکومت کی جانب سے کریک ڈاون آج کے جلسے کو روکنے کے لیے کیا گیا تھا تاہم اس کے باوجود لبیک پاکستان کے کارکنوں اور حامیوں نے ٹولیوں کی شکل میں لیاقت باغ پہنچنے کی کوشش کی، تاہم پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے متعدد افراد کو حراست میں لے لیا۔
پولیس کی جانب سے مری روڈ اور لیاقت باغ و فیض آباد جانے والے ایک ایک شخص کی چیکنگ کی جاری ہے۔دوسری جانب سلام آباد اور راولپنڈی میں آسیہ کی رہائی کے خلاف تحریک لبیک کا احتجاجی جلسہ روکنے کیلئے سخت سیکورٹی انتظامات کیے گئے اور پولیس و رینجرز کی بھاری نفری تعینات ہے۔ راولپنڈی میں لیاقت باغ کو بھی سیل کرکے رینجرز تعینات کردی گئی ہے جو کسی بھی ناخوشگوار واقعے سے نمٹنے کے لیے پوری طرح تیار ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں