روپے کی قدرمیں بدترین کمی سے امریکی ڈالر تاریخ کی بلند ترین سطح پر

نجی ٹی وی ’’ڈان نیوز‘‘ کے مطابق جمعے کو مارکیٹ کا آغاز ہوا تو اوپن بینک میں ڈالر کی قیمت میں اچانک 8 روپے اضافہ ہوا اور روپے کے مقابلے میں ڈالر 142 روپے تک جا پہنچا جبکہ کچھ بینکوں میں ڈالر مزید 2 روپے اضافے کے ساتھ 144 روپے تک ٹریڈ کرتے ہوئے دیکھا گیا۔دوسری جانب روپے کی قدر میں کمی اوپن مارکیٹ میں بھی دیکھی گئی اور ایک ڈالر 138 روپے میں خرید جبکہ 144 روپے میں فروخت ہوا۔تاہم بعد ازاں سٹیٹ بینک کی جانب سے اقدامات اٹھائے گئے، جس کے بعد مارکیٹ کے اختتام پر انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قدر واپس 137 روپے 70 پیسے پر آگی۔واضح رہے کہ ڈالر کی قیمت بڑھنے پر رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ چین کی کمپنی کی جانب سے900ملین ڈالر کی سرمایہ کاری ہونے جارہی ہے، یہ پہلامنصوبہ ہے، اب پاکستان میں باقاعدہ گاڑیاں مکمل تیار ہوں گی، پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے والوں کو بہترین سہولتیں فراہم کریں گے،ڈالرکی قیمت بڑھنے سے گھبرانے کی ضرورت بالکل نہیں، صبح سے فون بج رہا ہے کہا جارہا ہے، ڈالر مہنگا ہوگیا ہے، ہماری بدقسمتی تھی قرضہ لاتے تھے تو کہتے تھے ہم کامیاب ہوگئے، ہم وہ قدم اٹھارہے ہیں جس سے آگے ڈالر کے ریٹ نہیں بڑھیں گے،سرمایہ کاری سے ملازمتوں کے مواقع ملتے ہیں اور ڈالر ملک میں آتا ہے، چین سے کہا ہم ٹیکنالوجی ٹرانسفر چاہیے، آج بہت لوگ پریشان ہیں کہ ڈالرکی قیمت بڑھ گئی ہے، روپے کی قدرمیں کمی ڈالرنہ ہونے کی وجہ سے ہوئی،ڈالر ملک میں کیسے آئے گا؟ اس کے لئے سرمایہ کاری ضروری ہے، سرمایہ کاری آئے گی تو ڈالر سستا ہوگا اور ملکی معیشت کو فائدہ ہوگا، روپیہ اس لیے گرا کیونکہ ڈالرکی کمی ہے۔دوسری طرف وزیر خزانہ اسد عمر کا کہنا تھا کہ وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر کا کہنا ہے کہ ڈالر کی قیمت بڑھانے کا اختیار سنٹرل بینک کے پاس ہوتا ہے، چونکہ وہ لوگ ووٹ لے کر نہیں آئے ہوتے تو اس لیے اس کی ذمہ داری حکومت پر پڑتی ہے۔ڈالر کی بڑھتی قدر دیکھ کر بڑے ہوٹلوں نے بھی روپے کی بجائے اب ڈالروں میں بکنگ شروع کردی ہے اور ملک کے تین فائیو سٹار ہوٹلوں نے ڈالر میں بکنگ شروع کی۔ اسلام آباد میں 2 اور کراچی میں ایک فائیو سٹار ہوٹل نے ڈالر میں بکنگ کی ہے جب کہ یہ پہلی مرتبہ ہے کہ ہوٹل بکنگ کے لیے ڈالر میں ریٹ کوٹنگ شروع کی گئی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں