شرافت سے چلو گے تو بہتر ہے،تم اتنے طاقتور نہیں کہ عدالت کو ڈکٹیٹ کراﺅ، چیف جسٹس

کراچی :چیف جسٹس پاکستان جعلی ڈگری سکینڈل کیس میں سفارشیں کرانے پرشعیب شیخ پر اظہار برہمی کیا اورشعیب شیخ کوعدالتی حکم کے بغیر ملک نہ چھوڑنے کا حکم دے دیا۔

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ تم کس کس سے سفارشیں کرا رہے ہو؟،میں تمہیں چھوڑوں گا نہیں، خبردار اگرسفارش کرائی،پتہ ہے تمہارے لئے کون کون سفارش کر رہا ہے؟،شرافت سے چلو گے تو بہتر ہے،تم اتنے طاقتور نہیں کہ عدالت کو ڈکٹیٹ کراﺅ۔

نجی ٹی وی کے مطابق چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں بنچ نے جعلی ڈگری سکینڈل کیس کی سماعت کی،سربراہ ایگزیکٹ شعیب شیخ اپنے وکیل کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئے۔چیف جسٹس پاکستان نے سفارشیں کرانے پر شعیب شیخ پر سخت برہمی کا اظہار کیا اورسربراہ ایگزیکٹ کو عدالتی حکم کے بغیر ملک نہ چھوڑنے کا حکم دے دیا۔

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ تم کس کس سے سفارشیں کرا رہے ہو؟،میں تمہیں چھوڑوں گا نہیں، خبردار اگرسفارش کرائی،پتہ ہے تمہارے لئے کون کون سفارش کر رہا ہے؟،شرافت سے چلو گے تو بہتر ہے،تم اتنے طاقتور نہیں کہ عدالت کو ڈکٹیٹ کراﺅ۔

چیف جسٹس ثاقب نثار نے بول کے وکیل سے استفسار کیا کہ کیا 10 کروڑ روپے جمع کرائے،وکیل شعیب شیخ نے کہا کہ ہم نے گھر کے دستاویزات جمع کرادیئے ہیں،چیف جسٹس نے کہا کہ گھر کے دستاویزات نہیں بینک اکاﺅنٹ میں رقم چاہئے، شعیب شیخ سن لو! دم درودکام نہیں آئے گا،10 کروڑروپے جمع کراﺅ پھر کیس سنیں گے۔

چیف جسٹس نے شعیب شیخ سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ ورکرزکواس طرح ذلیل کرتے ہیں؟، 2ہفتے میں رقم جمع نہ کرائی توتوہین عدالت کیس چلائیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں