وادی نیلم میں پل ٹوٹنے سے 25 سیاح ڈوب گئے جبکہ 5 لاشیں نکال لی گئیں۔

آزاد کشمیر: وادی نیلم میں نالہ جاگراں کے مقام میں پل ٹوٹنے سے 25 سیاح ڈوب گئے جب کہ 5 کی لاشیں نکال لی گئیں۔

پولیس کے مطابق پُل پر 25 سے زائد سیاح تصویریں بنا رہے تھے کہ اچانک پل ٹوٹنے سے تمام سیاح ڈوب گئے تاہم 4 افراد کو بچالیا گیا ہے جب کہ دیگر کی تلاش جاری ہے۔

امدادی کارروائیوں میں ریسکیو ٹیموں کے ساتھ پاک آرمی کے جوان بھی شریک ہیں۔

پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ پانی میں ڈوبنے والے بیشتر سیاحوں کا تعلق لاہور اور فیصل آباد سے ہے۔

پل گرنے کے واقعے پر وزیراعظم آزاد کشمیر راجا فاروق حیدر نے مظفرآباد میں کنٹرول روم قائم کردیا اور متاثرہ خاندانوں کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ کنٹرول روم کے فون نمبر 0582220097 پر رابطہ کریں۔

وزیراعظم آزاد کشمیر نے واقعے کے بعد ڈپٹی کمشنر نیلم کو ٹیلی فون کیا اور امدادی کارروائیاں تیز کرنے کی ہدایت کی جب کہ انہوں نے واقعے کی فوری رپورٹ بھی طلب کرلی۔

وزیراعظم آزاد کشمیر کا کہنا تھا کہ حادثے کی وجوہات اور بد انتظامی کے ذمہ داروں کے خلاف کارروائی کی جائے، امدادی کارروائیوں میں ریسیکو ٹیموں کے ساتھ پاک آرمی بھی مصروف عمل ہے۔

آرمی چیف نے وادی نیلم میں پل ٹوٹنے کے واقعے پراظہارافسوس کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاک فوج سول انتظامیہ کو ہرممکن مدد فراہم کرے گی۔

تفصیلات کے مطابق آئی ایس پی آرکاکہنا تھا کہ پاک فوج کامتاثرہ علاقوں میں امدادی آپریشن جاری ہے ،پاک فوج کے جوانوں اور ڈاکٹروں پر مشتمل ٹیمیں کام کرر ہی ہیں۔آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ زخمیوں کو پاک فوج کے ہیلی کاپٹر کے ذریعے مظفراباد منتقل کردیا گیا ہے۔آئی ایس پی آر نے واضح کیا کہ آرمی چیف نے پاک فوج کوسول انتظامیہ کی ہرممکن مددکی ہدایت کی ہے اور وادی نیلم میں پل ٹوٹنے کے واقعے پراظہارافسوس کیا ہے۔

واضح رہے کہ آج (اتوار)وادی نیلم کے مقام پر پہاڑی نالے جاگراں کے اوپر بنے کنڈل شاہی پل پر کثیر تعداد میں سیاح موجود تھے وزن زیادہ ہونے کے باعث پل ٹوٹ گیا جس کے نتیجے میں خواتین اور بچوں سمیت 40 سیاح نالے میں گر گئے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں