ایبٹ آباد میں مون سون کی پہلی بارش نے تباہی مچادی نالوں کی بندش سے رہائشی گھر،مساجد ،دفاتر ،ہسپتال ،سڑکیں ،گاڑیاں پانی میں ڈوب گئیں

ایبٹ آباد : ایبٹ آباد میں مون سون کی پہلی بارش نے تباہی مچادی،نیشنل ہائی وے اتھارٹی ، کنٹونمنٹ بورڈ کی حدود میں نکاسی آب کے نالوں کی بندش سے رہائشی گھر،مساجد ،دفاتر ،ہسپتال ،سڑکیں ،گاڑیاں پانی میں ڈوب گئیں،بالائی علاقوں میں بھی متعدد مقامات پر لینڈ سلائیڈنگ سے رابطہ سڑکیں، ایبٹ آباد کو اسلام آباد سے ملانے والا ایوب پل بھی ٹریفک کے لئے بند،نوشہرہ چمبہ پل بھی منہدم ہوگیا ہے،مسلسل ہونے والی بارش سے پانی گریڈ اسٹیشن ،ہسپتالوں دفاتر میں داخل ہونے سے نظام زندگی ٹھپ ہو کے رہ گیا ،رہائشی علاقوں میں پانی چھ فٹ تک جمع ہونے کی اطلاع ،متعدد گاڑیاں اور کروڑوں مالیت کا گھریلو قیمتی سامان تباہ ہوا،لوگ گھروں میں محصور رہے،پیر اور منگل کی درمیانی شب مسلسل جاری رہنے والی بارش سے ایبٹ آباد ڈوب گیا کینٹ بورڈ ،اور نیشنل ہائی وے اتھارٹی کی نااہلی سے عوام سخت مصائب میں مبتلا رہے ،رات کو شروع ہونے والی بارش سے شہر میں کینٹ بورڈ کی حدود کے نشیبی علاقے بلال ٹاؤن ،حسن ٹاؤن ،گرگا ،کالا پل ،سرسید کالونی ،سپلائی،مری روڈ، سمیت دیگر مقامات پر بارش کا پانی چھ فٹ تک جمع ہونے سے گھر ،دکانیں ڈوب گئیں جس کے نتیجہ میں رات لوگوں نے چھت پر گزاری گھروں میں محصور ہونے سے بچوں اور عورتوں میں خوف کی کیفیت رہی ،اسی طرح بارش کا پانی ایوب میڈیکل کمپلیکس کے انتہائی نگہداشت سمیت دیگر وارڈز میں بھی داخل ہوا جس سے مریض بھی رات بھر بے چینی سے دوچار رہے ،ایبٹ آباد میں مری روڈ پر گرڈ اسٹیشن کے اندر بھی پانی جمع ہونے سے بجلی کا نظام بھی درہم برہم رہا اور متعدد ٹرانسفارمر بھی متاثر ہونے سے بجلی کا بھی طویل بریک ڈاؤن رہا ہے ،کیہال میں بھی دیوار گرنے سے پارکنگ میں موجود متعدد قیمتی گاڑیوں کے تباہ ہونے کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں اور بالائی علاقوں پاوا منڈیاں روڈ ،نوشہرہ گاؤں بیرن گلی سمیت دیگر علاقوں میں لینڈ سلائیڈنگ سے رابطہ سڑکیں منقطع ہو چکی ہیں جس کی وجہ سے عوام محصور رہے، اور شہر میں سپلائی کے مقام پر دکانوں میں پانی داخل ہونے پر تاجروں نے مین شاہراہ پر احتجاجی مظاہرہ کرکے مین شاہراہ کو بند کیا،ادھر مسلسل بارش کے نتیجہ میں عوام کو امدادی کاروائیوں میں ریسکیو 1122کا عملہ بھی متحرک رہا اور لوگوں کو محفوظ مقامات پر منتقل کر تے رہے،واضح رہے کہ ایبٹ آباد شہر میں مون سون کی پہلی بارش کے بعد شہر ڈوب جانے کا اہم سبب تجاوزات کی بھرمار اور نکاسی آب نالوں کی صفائی نہ ہونا ہے جس کی وجہ سے سینکڑوں لوگوں کا کروڑوں کا نقصان ہوا ہے ،عوام نے منتخب عوامی نمائندوں کینٹ بورڈ افسران اور ضلعی انتظامیہ پر زور دیا ہے کہ وہ شہر کو تباہ ہونے سے بچانے کے ہنگامی اقدامات اٹھائیں۔

Heavy Rain in Abbottabad

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں