پاکستان خواتین کرکٹ ٹیم کی نمائگندگی کا اعزاز حاصل کرنے والی ایبٹ آباد کی پندرہ سالہ عائشہ نسیم

یبٹ آباد(سپورٹس رپورٹر )آئندہ ماہ آسٹریلیا میں کھیلے جانے آئی سی سی ٹی 20 ویمنز ورلڈ کپ میں پاکستان خواتین کرکٹ ٹیم کی نمائگندگی کا اعزاز حاصل کرنے والی ایبٹ آباد کی پندرہ سالہ عائشہ نسیم نے کہا ہے کہ پاکستان کرکٹ ٹیم کی نمائندگی ان کا خواب تھا اور وہ آئندہ ماہ آسٹریلیا میں کھیلے جانے والے آئی سی سی ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ میں قوم اور ٹیم مینجمنٹ کو مایوس نہیں کریں گی اور ٹیم کی سیمی فائنل تک رسائی ان کا اہم ہدف ہے جبکہ وہ کم عمری میں ہی ٹیم میں منتخب ہونے کو اپنے اور کے پی کے لیے اعزاز سمجھتی ہیں اور وہ صرف اور صرف محنت اور لگن پر یقین رکھتی ہیں اور اسی جذبے اور جنوں کی بدولت وہ نہ صرف پاکستان بلکہ دنیائے کرکٹ میں اپنا ایک منفرد بنانے کے لیے کوئی کسر روا نہیں رکھیں گی ان خیالات کا اظہار انہون نے سپورٹس ڈائریکٹوریٹ ایبٹ آباد کی جانب اپنے اعزاز میں منعقدہ خصوصی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا جبکہ اس موقع پر کھیلوں کی مختلف تنظیموں کے عہدے داروں اور خواتین کھلاڑیوں نے شرکت کی تقریب سے اپنے خطاب میں سابق ڈی جی سپورٹس طارق محمود ڈسٹرکٹ سپورٹس آفیسر وسیم فضل ڈسٹرکٹ یوتھ آفیسر میڈم بشری کبڈی ایسوسی ایشن کے صدر طاہر منیر اعوان اور ممتاز کرکٹ آرگنائزر شوکت گل جدون نے اپنے خطاب میں عائشہ نسیم کی انتہائی کم عمری میں ٹی ٹونٹی ورلڈ کپ سکواڈ کا حصہ بننے پر انتہائی مسرت اور خوشی کا اظہار کرتے ہوئے اسے نہ صرف ایبٹ آباد بلکہ صوبہ بھر کے لیے اعزاز قرار دیا اور کہا کہ وہ ایبٹ آباد کی اپنے پیش روء کھلاڑیوں کانتا جلیل اور ثناء میر کے نقش قدم پر چلتے ہوئے ملک کا نام روشن کرتے میں کوئی کسر روا نہیں رکھیں گی اور ورلڈ کپ میچز میں پاکستان کرکٹ ٹیم کی کامیابی میں اہم کردار ادا کریں گی جبکہ ورلڈ کپ کے بعد ان کے اعزاز میں ایک بڑھی خصوصی تقریب کا انعقاد کیا جائے گا اس موقع پر سپورٹس ڈائریکٹوریٹ ایبٹ آباد کی جانب سے عائشہ نسیم کو سونیر اور دیگر تحائف بھی پیش کیے گئے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں