ایبٹ آباد تحصیل لوہر تناول میڈیکل کیمپس میں 1400سو سے زائد مریضوں کو فری چیک اپ اور ادویات فراہم کی

ایبٹ آباد تحصیل لوہر تناول میڈیکل کیمپس میں 1400سو سے زائد مریضوں کو فری چیک اپ اور ادویات فراہم کی گئیں جب کہ ٹی بی کے ایک سو دس مریضوں کے ٹیسٹ کئیے گے جن میں چار افراد ٹی بی پازیٹیو نکلے جنکا مزید فری علاج کیا جائے گا تکیہ حال اور شیروان میں فری میڈیکل کیمپس کا اہتمام کیا گیا جس میں خواتین بچوں مرد حضرات سمیت بزرگ افراد اور خواتین کی بڑی تعداد نے فری میڈیکل کیمپ میں شرکت کی فری میڈیکل کیمپ کا اہتمام ڈپٹی ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر شہزاد اقبال سندھ میڈیکل ڈاکٹر ویلفئیر ایسوسی ایشن کے چئیرمیں ڈاکٹر امجد گلزار شیخ۔ طارق خان تنولی سیو لائف تھیلیسیمیا چلڈرن پاکستان کی چیئرمین زینب طارق ۔کامران خان ہارون تنولی کے تعاون سے کیمپ کا اہتمام کیا گیا جس میں ڈسٹرکٹ ہیلتھ کی ٹیم جسکی سربراہی ڈاکٹر شہزاد اقبال ڈپٹی ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر کر رہے تھے جن میں ڈاکٹر عابد زیب لیڈی ڈاکٹر کومل زلفقار ڈاکٹر اسرار احمد ڈاکٹر ہارون۔ڈاکٹر عاطف۔ٹی بی سی کوآرڈینیٹر ہزارہ خالد خان ۔ایل ایچ وی میڈیم بشری ساجدہ بیبی سی ایم ڈبلیو عامرہ نور عقیلہ بانو بلال احمد۔منیر احمد۔مسکئن ۔بلال ۔حیدر علی شاہ احسن ۔یاسین۔طاہر شیزاد۔مظہر خان نے نے ڈسٹرکٹ ہیلتھ اور ٹی بی کنٹرول پروگرام کے ڈاکٹر سٹاف نے دونوں فری میڈیکل کیمپوں میں اپنی حدمات سر انجام دی تناول کی تاریخ کا سب سے بڑا میڈیکل کیمپ تھا جس میں دونوں یونین کونسل کے چودہ سو سے زائد مریضوں کو فری چیک اپ کیا گیا اور ادویات اور پچیس سپیشل افراد کو چھڑیاں بھی فراہم کی گئیں علاقہ تناول کا علاقہ انتہای پاسماندہ علاقہ اور صحت کی سہولیات نہ ہونے کی وجہ سے غریب لوگ مسائل کا شکار ہیں سینکڑوں کی تعداد میں غریب افراد جو ہر وقت مسیحا کے منتظر ہوتے ہیں سیاسی اور سماجی شخصیات کو سامنے آہ کر علاقہ تناول میں صحت کی سہولیات کو پہنچانے کے لئیے کردار ادا کرنا چائیے جب کہ ان دونوں میڈیکل کیمپوں میں سندھ میڈیکل ڈاکٹر ویلفئیر ایسوسی سیو لائف تھیلیسیمیا چلڈرن پاکستان نے ادویات کی فراہمی کو یقینی بنایا جسکی وجہ سے فری میڈیکل کیمپ کا انعقاد ممکن ہوا علاقہ شیروان تناول بھر میں صحت کی سہولیات کے لئیے ڈسٹرکٹ ہیلتھ کو مزید اقدامات کرنے ہونگے بہت بڑی تعداد میں علاقہ بھر میں غریب افراد موجود ہیں جنکو صحت کی سہولیات محکمہ صحت سمیت سیاسی سماجی شخصیات کو بھی کردار ادا کرنا ہو گا محکمہ صحت کے ساتھ مل کر تناول بھر میں صحت کی سہولیات کو بہم پہنچانا ہوگا پاسماندگی کی وجہ سے علاقہ مسائل کا شکار ہے منتحب نمائندگان خواب خرگوش میں پڑھے ہوئے ہیں محکمہ صحت کے زمعہ داران مزید میڈیکل کیمپس کا اہتمام علاقہ بھر میں کریں تو بڑی تعداد میں لوگوں کو صحت کی سہولیات پہنچائ جا سکتی ہیں حاص کر ٹی بی کے مریضوں کی تعداد بھی علاقہ بھر میں کافی کا جنکو علاج کی ضرورت ہے ایک سو دس افراد کے ٹیسٹ میں سے چار افراد ٹی بی کی مہلک مرض کا شکار ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں