میڈیا ملک کا چوتھا ستون ! تحریر: طارق تنولی

تحریر: طارق تنولی
میڈیا کو ملک کا چوتھا ستون گردانا جاتا ہے، صحافی کسی بھی معاشرے کا فیس ہوتے ہیں اگر ان کی رپورٹنگ مثبت اور جاندار ہوگی تو معاشرے کا چہرہ صاف ستھرا دکھائی دے گا اور اگر وہ میڈیا کارڈ کو بطور بلیک میلنگ ہتھیار استعمال کریں گے تو اس کے دھبے معاشرے کے چہرے پر بھی بدنما داغ کی طرح نظر آئیں گے، بدقسمتی سے مرکز میں بیٹھے صحافیوں کے علاوہ اضلاع سے تعلق رکھنے والے اخباری اور ٹی وی چینل نمائندوں کو سرکاری طور پر کسی بھی مطالعاتی دورے میں ترجیح نہیں دی جاتی اورا نہیں بطور داتا دربار کے مجاور کی حیثیت سے استعمال کیا جاتا ہے جو داتا دربار سے چاول کھا کر اپنا پیٹ بھرتا ہے اور صاحب کیلئے لفافے میں چاول ڈال کر لاتا ہے حالانکہ اضلاع کی رپورٹنگ کرنے والے نمائندے صرف ایک بیٹ پر کام نہیں کرتے بلکہ آل راؤنڈر ہوتے ہیں حکومت کو چاہئے کہ بیرون ملک دوروں میں اضلاع سے تعلق رکھنے والے صحافیوں کو بھی وہاں کے پریس کلبز کے ذمہ داران کی وساطت سے ملکی، بین الصوبائی اور بین الاقوامی مطالعاتی دورے کرائیں، پریس کلب ایبٹ آباد صوبہ خیبر پختونخواہ کا دوسرا بڑا پریس کلب ہے تاہم اسے ملکی سطح کے تمام چھوٹے بڑے پریس کلبوں میں منفرد مقام حاصل ہے پریس کلب کے ممبران کو حکومتوں کی طرف سے فراہم کردہ فنڈ سے عمرہ کرایا گیا، موٹر سائیکل اور لیپ ٹاپ فراہم کئے گئے اور گروپ انشورنس کا سلسلہ بھی جاری ہے، گزشتہ دنوں پریس کلب ایبٹ آباد اور ایبٹ آباد یونین آف جرنلسٹس کے ممبران کو چار روزہ مطالعاتی دورہ کرایا گیا جس میں انہیں خانیوال میں دریائے راوی، ملتان میں شاہ رکن الدین عالم سہروردی کے مزار کی زیارت کے ساتھ لاہور میں دہلی گیٹ، شاہی قلعہ، شیش محل کی بھی سیر کرائی گئی اور داتا دربار پر بھی حاضری کا شرف بخشا مطالعاتی دورے میں ہم نے سب سے پہلے خانیوال جانا تھا، خانیوال، کبیر والا اور لاہور پریس کلب کے صحافی دوستوں کی محبتوں، چاہتوں اور خلوص کا بدلہ چکانا اگرچہ ہمارے بس میں نہیں اور نہ ہی الفاظ میں دوستوں کی محبتوں، خلوص اور پیار کو سمیٹا جاسکتا ہے تاہم اپنی بساط کے مطابق چند ٹوٹے پھوٹے لفظوں میں اتنا ہی لکھوں گا کہ اللہ تعالیٰ صدر پریس کلب خانیوال لطیف انور، جنرل سیکرٹری ندیم مغل، سینئر صحافیوں طاہر نسیم، امتیاز اسد، شاہد انجم، رانا سلیم، راشد بن امیر، محمد رضا و دیگر احباب، کبیر والا پریس کلب کے صدر حفیظ سعیدی، جنرل سیکرٹری سید ذوالقرنین شاہ، سابق صدر میاں عبد الحفیظ، صدر لاہور پریس کلب ارشد انصاری کی عزتوں میں اضافہ کرے اور انہیں صحت و تندرستی والی زندگی نصیب کرے، اس موقع پر ڈپٹی کمشنر خانیوال ظہیر شیرازی، صوبائی وزیر زراعت پنجاب میاں حسین جہانیاں گردیزی، فرزند وفاقی وزیر سید فخر امام شاہ سید عبد امام فخر، جماعت اسلامی پاکستان کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات قیصر شریف، دعوت اسلامی پاکستان فیضان مدینہ کے محمد عثمان عطاری، یعفور عطاری و دیگر احباب اور نیو ٹی وی کے نیوز ڈائریکٹر محمد عثمان، کنٹرولر نیوز سمیع الحق اور نیوز سیکشن انچارج عبد الوحید کا شکریہ ادا نہ کروں تو یہ صحافی بددیانتی ہوگی جنہوں نے مقامی صحافی دوستوں کی درخواست پر نہ صرف استقبالیہ تقریبات میں شرکت کی بلکہ اپنی بھرپور محبتوں کا اظہار کیا اور عمدہ مہمان نوازی کے فرائض بھی سرانجام دیئے، یاد رہے کہ ایبٹ آباد پریس کلب کا 23 رکنی وفد 18 فروری بروز جمعرات کو صدر پریس کلب ایبٹ آباد محمد عامر شہزاد جدون، جنرل سیکرٹری راجہ محمد ہارون کی قیادت میں چار روزہ مطالعاتی دورے پر خانیوال روانہ ہوا وفد میں نوید اکرام عباسی، طارق تنولی، سید طاہر شاہ، عادل عباسی، عاطف خان جدون، عبد الواسع خان جدون، ندیم خان جدون، دلدار احمد ستی، سلطان محمود ڈوگر، جمیل احمد جمیل، سہیل عباسی، ہارون خان تنولی، راشد اعوان، سردار راشد، علی عمران، عتیق احمد، عاطف خان سمیت دیگر موجود تھے مطالعاتی دورے کا شیڈول خانیوال سے ملتان اور پھر لاہور واپسی تھی، سفر کے دوران پریس کلب کے سینئر و جونیئر ممبران کی نوک جھونک، طنز و مزاح اور سیر و تفریح کے دوران معلومات اکٹھی کرنے کا شوق و جستجو ناقابل بیان ہے، یقیناً بہت انجوائے کیا اور بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا، راستے میں ہم نے کوٹ مومن میں گجر ریسٹورنٹ پر دوپہر کا کھانا کھایا، خانیوال کے دوستوں کیلئے سرگودھا سے مالٹوں کا تحفہ لیا اور پھر سفر پر روانہ ہوگئے، خانیوال پہنچنے پر صحافی دوستوں نے ہمارا بھرپور استقبال کیا اور ڈھولک کی تھاپ پر پھولوں کی پنیاں نچھاور کرتے ہوئے ہمیں خانیوال پریس کلب پہنچایا گیا جہاں سب سے پہلے ہم نے خانیوال پریس کلب کے صحن میں اپنی یادوں کے انمٹ نقوش چھوڑنے کیلئے شجر کاری مہم کے سلسلے میں پودا لگایا جہاں ہماری ٹیم کے ہاتھوں سے 2011 میں لگایا ہوا پودا جوان ہوچکا تھا، بعد ازاں نماز مغرب تعارفی پروگرام کا انعقاد کیا گیا اور خانیوال پریس کلب کے ساتھیوں نے ایبٹ آباد پریس کلب کے 23 رکنی وفد کو ویلکم کرتے ہوئے اپنے زریں خیالات سے نوازا، صدر پریس کلب ایبٹ آباد محمد عامر شہزاد جدون اور جنرل سیکرٹری سمیت دیگر سینئر ممبران نے شاندار استقبال اور مہمان نوازی پر خانیوال پریس کلب کے ساتھیوں کا شکریہ ادا کیا، رات کے سٹے کے بعد اگلے دریائے راوی پر واقع 1960 میں تعمیر کئے جانے والے ہیڈ سدھنائی بریج کی معلومات سے آگاہ کیا اور الجدید فیڈر کے منیجر چوہدری نوید نے پرتکلف ظہرانہ دیا، دوسرے روز رات کے ڈنر کا اہتمام کبیر والا پریس کلب کے دوستوں نے کر رکھا تھا جس میں صوبائی زراعت پنجاب میاں حسین جہانیاں گردیزی سمیت وفاقی وزیر سید فخر امام شاہ کے فرزند سید عابد امام فخر بھی مدعو تھے پریس کلب پہنچنے پر صدر کبیر والا پریس کلب حفیظ سعیدی، جنرل سیکرٹری سید ذوالقرنین شاہ، سابق صدر میاں عبد الحفیظ و دیگر ممبران نے بھرپور استقبال کیا، پرتکلف دعوت کا اہتمام کیا اور اپنی بھرپور محبتوں سے نوازا رات کو دوبارہ خانیوال میں سٹے کے بعد اگلے دن یعنی تیسرے روز ہم خانیوال پریس کلب کے ساتھیوں جناب طاہر نسیم، جناب شاہد انجم، رانا سلیم، امتیاز اسد و دیگر کے ہمراہ صبح کا ناشتہ رانا سلیم کی رہائش گاہ پر کرنے کے بعد ملتان روانہ ہوئے اور حضرت شاہ رکن الدین عالم سہروردی کے دربار پر حاضری دی جہاں سینئر صحافی طاہر نسیم کے دیرینہ دوست مذہبی، سیاسی و سماجی شخصیت شیخ محمد اشرف قریشی جو پاکستان مسلم لیگ فنگشنل کے جنوبی پنجاب کے ہیڈ بھی ہیں انہوں نے پریس کلب ایبٹ آباد اور خانیوال پریس کلب کے دوستوں کو حضرت شاہ رکن عالمؒ کے مزار کی سیر کرائی اور انتہائی مفید معلومات سے روشناس کرایا جس کے بعد ہم لاہور کی طرف روانہ ہوئے، ملتان موٹر وے پر چڑھنے سے قبل آئی جی موٹر وے کے ذمہ داران ندیم احمد وڑائچ کی طرف سے ہمیں دوپہر کا کھانا دیا گیا اس کے بعد پریس کلب لاہور پہنچنے پر صدر ارشد انصاری و دیگر کی طرف سے فوڈ سٹریٹ لاہور میں استقبال کیا گیا اور ڈنر دیا گیا اگلے روز صبح کا ناشتہ دعوت اسلامی پاکستان فیضان مدینہ لاہور کی طرف سے دیا گیا جہاں محمد عثمان اور ان کے ساتھیوں نے بہترین ناشتے کا اہتمام کیا جس میں لاہوری چھولوں اور پائے کے ساتھ میٹھی لسی پیش کی گئی، یعفور عطاری نے اپنے زریں خیالات سے مستفید کیا، اس موقع پر فیضان مدینہ کے مختلف شعبوں کی سیر بھی کرائی گئی، ایبٹ آباد پریس کلب کا وفد بعد ازاں دہلی گیٹ پہنچا جہاں صدر لاہور پریس کلب ارشد انصاری پہلے سے موجود تھے اور انہوں نے دہلی گیٹ کی سیر کرائی اس کے بعد ہم شاہی قلعہ روانہ ہوئے جہاں ہم نے شیش محل سمیت تاریخی حصوں کی سیر کی اور معلومات حاصل کیں اور شام کو ہم نیو ٹی وی کے دفتر کے وزٹ کے بعد داتا دربار پہنچے اور داتا دربار پر حاضری کے بعد ہمارا قافلہ واپس روانہ ہوا۔

Media: The fourth pillar of the state


اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں