وزیرِاعظم عمران خان نے ملک میں سیاحتی مقامات کے فروغ اور تعمیر و ترقی کے لئے حکمت عملی و منصوبہ بندی کے فوری آغاز کی ہدایت


اسلام آباد ۔(اے پی پی) وزیرِاعظم عمران خان نے ملک میں سیاحتی مقامات کے فروغ اور تعمیر و ترقی کے لئے حکمت عملی و منصوبہ بندی کے فوری آغاز کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملک میں مختلف قسم کی سیاحت کے فروغ سے معاشی عمل میں تیزی آئے گی اور مقامی آبادیوں کے لئے نوکریوں اور روزگار کے مواقع بھی میسر آئیں گے، اس حوالے سے سرکاری ملکیتی عمارات کو مثبت انداز میں بروئے کار لانے کے لئے بھی اٹھائے جانے والے اقدامات کو مزید مو¿ثر بنایا جائے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے بدھ کو ملک میں سیاحت کے فروغ کے لئے اٹھائے جانے والے اقدامات کے حوالے سے اعلیٰ سطحی جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں وزیر برائے بحری امور سیّد علی حیدر زیدی، وزیرِاعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار، وزیرِاعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان، معاونین خصوصی لیفٹیننٹ جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ، سیّد ذوالفقار عباس بخاری، ڈاکٹر شہباز گل، وزیرِاعلیٰ پنجاب کے مشیر آصف محمود، صوبائی چیف سیکرٹری صاحبان و دیگر سینئر افسران شریک ہوئے۔ وزیراعظم میڈیا آفس کے مطابق وزیرِ اعظم کی ہدایت پر ملک میں سیاحت کے فروغ اور اس حوالے سے بین الصوبائی روابط اور کوآرڈینیشن کو بہتر بنانے کے لئے نیشنل کوآرڈینیشن کمیٹی برائے سیاحت کے قیام کا فیصلہ کیا گیا۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ این سی سی کے اجلاس باقاعدگی سے منعقد کئے جائیں۔ اجلاس میں صوبہ پنجاب اور صوبہ خیبر پختونخوا میں ٹورازم اتھارٹی کے قیام کے عمل کو جلداز جلد پایہ تکمیل تک پہنچانے، سیاحتی مقامات پر ناجائز تجاوزات کے خاتمے کیلئے فوری طور پر مہم کے آغاز اورسیاحتی مقامات کے حوالے سے جامع اور مفصل ویسٹ منیجمنٹ پلان تشکیل دینے کا فیصلہ کیا گیا۔ اس کے علاوہ نجی شعبے کے تعاون سے سیاحتی مقامات پر معیاری سفری سہولیات کی فراہمی کے لئے جامع منصوبہ بندی اور اقدامات کا فیصلہ بھی کیا گیا۔ وزیرِ اعظم کو بتایا گیا کہ آئندہ 10 سالوں (2020-30ئ) کے لئے نیشنل ٹورازم سٹرٹیجی کو حتمی شکل دے دی گئی ہے تاکہ وفاق اور صوبوں کے درمیان بہتر کوارڈینیشن اور ملک میں سیاحت کے فروغ کے لئے منظم اقدامات اٹھائے جا سکیں۔ دس سالہ نیشنل ٹورازم سٹرٹیجی کو مد نظر رکھتے ہوئے آئندہ پانچ سال کے لئے ایکشن پلان ترتیب دیا جا چکا ہے۔ نیشنل ٹورازم سٹرٹیجی پر عملدرآمد کے حوالے سے سیاحت کے ہر شعبے کے لئے یکساں معیار مرتب کرنے کے ساتھ ساتھ ملک بھر میں مختلف ایونٹس کے لئے نیشنل کیلینڈر مرتب دیا گیا ہے۔ وزیرِ اعظم کو سرکاری ریسٹ ہاو¿سز، گورنر ہاو¿سز و دیگر سرکاری گیسٹ ہاو¿سز کے مثبت استعمال کے حوالے سے لئے گئے فیصلوں پر عمل درآمد میں پیش رفت کی رپورٹ پیش کی گئی۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیرِ اعظم نے کہا ملک میں سیاحت کا بے انتہا پوٹینشل موجود ہے۔ وزیرِ اعظم نے کہا کہ ہمارا مقصد ملک کے طول و ارض میں پھیلے سیاحتی مقامات کو اس انداز میں ترقی دینا ہے کہ وہ ہماری تہذیب اور ہماری سماجی اقدار کی عکاسی کریں اور سیاحوں کے لئے سیاحت کی معیاری سہولیات میسر آئیں۔ وزیرِ اعظم نے کہا کہ ملک میں مختلف قسم کی سیاحتوں کے فروغ سے معاشی عمل میں تیزی آئے گی اور مقامی آبادیوں کے لئے نوکریوں اور روزگار کے مواقع میسر آئیں گے۔ اس حوالے سے وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ سیاحتی مقامات کے فروغ اور تعمیرو ترقی کے لئے حکمت عملی و منصوبہ بندی کا فوری طور پرآغاز کیا جائے۔ وزیرِ اعظم نے سرکاری ملکیتی عمارات جن میں تاریخی عمارات ، گورنر ہاﺅسز، گیسٹ ہاو¿سز وغیرہ شامل ہیں کو مثبت انداز میں بروئے کار لانے کے لئے بھی اٹھائے جانے والے اقدامات کو مزید موثر بنانے کی ضرورت پر زور دیا تاکہ نہ صرف ان عمارات کی عوام کے لئے دستیابی کو یقینی بنایا جا سکے بلکہ ان سے حاصل ہونے والی آمدن کو ان عمارات کی تزئین و آسائش اور تحفظ کے لئے استعمال کیا جا سکے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں